سجدہ

بقول  ساغر  صدیقی:
آو  اک  سجدہ  کریں  عالمِ  مدہوشی  میں
لوگ  کہتے  ہیں  ساؔغر  کو  خدا  یاد  نہیں

عام  طور پر  جب  بھی  ہم  لفظ  “سجدہ”  سنتے  ہیں  تو  ہمارے  ذہن  میں  حضرت  آدم       والا  سجدہ  آتا  ہے۔  خدا  نے  آدم  کو
تخلیق  کیا  اور  پھر  انہیں  کچھ  چیزوں  کا  علم  دیا۔  خدا  نے  پھر  اپنی  مخلوقات  کو  حکم  دیا کہ  وہ  آدم  کو  سجدہ  کریں۔  سب  نے  خدا  کے  حکم  کو  مانا  سوائے  ایک  کے  اور  وہ  تھا  شیطان۔  اس  کا  سجدہ  نہ  کرنے  کی  وجہ  یہ  تھی  کہ  وہ  خود  کو  انسان  سے  بہتر  سمجھتا  تھا۔  اب  اس  بات  پہ  بہت  غور  کریں  کہ  وہ  خدا  کے  سامنے  جھکنے  اور  سجدہ  کرنے  سے  انکار  نہیں  کر رہا  تھا۔  نا  ہی  وہ  خدا کو  ماننے  سے  انکار  کر رہا تھا۔ بلکہ  وہ  صرف  انسان  کے  سامنے  جھکنے  سے انکار  کر رہا  تھا۔ سجدہ  کہنے  کو  ایک  عمل  ہے  لیکن  اس  عمل  کی  کیا  طاقت  ہے  آج  تک  کوئی  اس  کو  جان  نہ  سکا۔  سجدے  کی  طاقت  کے  حوالے  سے  کہا  جاتا  ہے   کہ  اگر  ہم  زمین  پر  سجدہ  کرتے  ہوئے کوئی  دعا  کریں  تو  وہ  آسمانوں  میں  سنی  جاتی  ہے۔  سجدہ  ہماری  نماز  کا  بھی  ایک  اہم  حصہ  ہے۔ شیطان  نے  تو  صرف  ایک  سجدے  سے   انکار  کیا  اور  آج  ہم  ایک  دن  میں  نا جانے  کتنے  سجدے  اپنی  سْستی  اور  لاپرواہی  کی  وجہ  سے  چھوڑ  دیتے  ہیں۔

بقول علامہ اقبال:
یہ  ایک  سجدہ  جسے  تو  گراں  سمجھتا  ہے
ہزار  سجدے  سے  دیتا  ہے  آدمی  کو  نجات

قرآن مجید میں ارشاد ہوا ہے:
“مومنو! رکوع  کرتے  اور سجدے  کرتے  اور  اپنے  پروردگار  کی  عبادت  کرتے  رہو  اور  نیک  کام  کرو  تاکہ  فلاح  پاؤ”۔
سورة  الحج  آیت  نمبر 77۔

Advertisements

Leave a Reply

Please log in using one of these methods to post your comment:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s