مرزا غالب اور کرنل براؤن

 

۱۸۵۷؁ء کی  جنگ  آزادی  میں  فتح  کے  بعد  انگریز  برصغیر  میں  اپنے  قدم  جما  چکا  تھا۔  انگریز  حکمرانوں  نے  برصغیر  کی  عوام  ساتھ  بہت  برا  سلوک  کیا۔ انگریز  نے  شہروں  میں  رہنے  والے  لوگوں  کو  ٹکٹ  جاری  کیے۔  موجودہ  دور  میں  اس  کو  شناختی  کارڈ  کہتے  ہیں۔ تھانوں  میں  نقشے  مرتب  کیے  گئے  اور  سپاہیوں  کو  یہ  احکامات  دیے  گئے  کہ  دیکھیں  کون  ٹکٹ  رکھتا  ہے  اور  کون  ٹکٹ  کے بغیر  شہر  میں  مقیم  ہے۔  ایک  دن  ایک  سپاہی  مرزا  غالب  کے  گھر  گیا  اور  ان  سے ٹکٹ  کا  مطالبہ  کرنے  لگا۔  اس  پر  غالب  نے  اس  سے  کہا  ”مجھے  ٹکٹ  والے  نقشے  میں  شامل  نہ  کر۔  نقشے  کے  ساتھ  میری  ایک  عبارت  لکھ  دے“۔

مرزا  غالب  نے  پھر  سپاہی  کو  ذیل  میں  دی  گئی  عبارت  لکھوائی:
”اسد  اللہ  خاں  پنسن دار  ۱۸۵۷؁ء  سے  حکیم  پٹیالے  والے  کے  بھائی  کی  حویلی  میں  رہتا  ہے۔  نہ  کالوں  کے  وقت  میں  کہیں گیا،  نہ  گوروں  کے  زمانے  میں  نکلا  اور  نکالا  گیا۔  کرنل  براؤن  صاحب  بہادر  کے  زبانی  حکم  پر  اس  کی  اقامت  کا  مدار  ہے۔ اب  تک  کسی  حاکم  نے  وہ  حکم  نہیں  بدلا۔  اب  حاکم  وقت  کو  اختیار  ہے“۔
یہ  عبارت  سپاہی  نے  محلے  کے  نقشے  کے  ساتھ  کو توالی بھیج دی۔
یہ  تحریر  لکھنے  کا  مقصد  کرنل  برن  اور  مرزا  غالب  کے  واقع  سے  آگاہ  کرنا  تھا۔  کرنل  براؤن  فتح  دہلی  کے  بعد  شہر  کا  فوجی گورنر  مقرر  ہوا  تھا۔
برطانیہ  مخالف  بغاوت  کے  دوران،  برطانوی  فوجیوں  کے  کشمیری  گیٹ  کے  ذریعے  داخل  ہونے  کے تین  ہفتے  بعد  5  اکتوبر ۱۸۵۷؁ء  کو   کچھ  فوجی  غالب  کے  پڑوس  میں  جمع  ہوگئے  اور  غالب  کو  پوچھ  گچھ  کے  لئے  گھسیٹ  کر   کرنل  براؤن  کے پاس  لے  گئے۔  غالب  ایک  وسط  ایشیائی  ترکیائی  سٹائل  پردہ  پہن  کر  کرنل  کے  سامنے  پیش  ہوئے۔  غالب  کے  ظہور  کے وقت  کرنل  حیران  ہوئے  اور  ٹوٹی  ہوئی  اردو  میں  سوال  کیا۔
کرنل:  تم!  مسلمان  ہو؟
غالب:  جی  حضور  آدھا۔
کرنل:  آدھا؟
غالب: میں  شراب  پیتا  ہوں  لیکن  سور  کا  گوشت  نہیں  کھاتا۔
اس  پر  کرنل  ہنس  دیے  اور  اپنے  شہر  کے  تمام  فوجیوں  کو  حکم  جاری  کروایا   کہ  مرزا  غالب  کے  ساتھ  کوئی  بدسلوکی  نہ  کی جائے  اور  انہیں  بغیر  کسی  تنگی  کے  اس  شہر  میں  رہنے  دیا  جائے۔  اس  کے  بعد  سے  غالب  کرنل  براؤن  کے  زبانی  حکم  پر دہلی  میں  ہی  رہے۔

نوٹ:  غالب  کی  سپاہی  کو  لکھوائی  گئی  عبارت  ان  کے  میر  مہدی  حسین  مجروح  کو  لکھے  گئے  خط  سے  لی  گئ  ہے۔

 

Advertisements

Leave a Reply

Please log in using one of these methods to post your comment:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s